پڑوسی کے ساتھ صلۂ رحمی

Sun, 04/16/2017 - 11:11

چکیده: خداوند متعال نے اسلام میں ھمارے اوپر ھمسایہ کے لیے کچھ حقوق رکھے ہیں کہ اگر ھم اسکے حقیقی بندے ہیں تو ھمیں ان کی رعایت کرنا ضروری ہے ۔

پڑوسی  کے ساتھ صلۂ رحمی

حضرت فاطمۃ الزھراء علیھا السلام ھمسایے  کے حقوق کے بارے میں ارشاد فرماتی ہیں :

عن ابن مسعود قال جاء رجل الی فاطمة علیها سلام فقال یا بنت رسول الله هل ترک رسول الله صلی‌الله‌علیه‌وآله‌وسلم عندک شیئاً فطو قنیه فقالت یا جاریة هات تلک الجریدة ، فطلبتها فلم تجدها فقالت و یلک اطلیبها فانها تعدل عندی حسناً و حسیناً ، فطلبتها فاذاً هی قدقممتها فی قمامتها فاذاً فیها قال محمد النبی صلی‌الله‌علیه‌وآله‌وسلم لیس من المؤمنین من لم یأمن جاره بوائقه و من کان یؤمن بالله و الیوم الاخر فلا یؤذی جاره.

ابن مسعود سے روایت نقل ہوئی ہے کہ ایک شخص جناب زھراء علیھا السلام کی خدمت میں حاضر ہوا  ، اور عرض کیا اے بنت رسول  آیا    رسول کا بچا کچھ آپ کے پاس ہے ؟

سیدہ فرماتی ہیں کہ ایک دن رسول (صلی اللہ علیہ وآلہ اسلم) نے اپنی کنیز سے کہا جاو   اور وہ لکڑی لے آؤ  کنیز کو وہ لکڑی نہ ملی تو رسول(صلی اللہ علیہ وآلہ اسلم) نے فرمایا  اسے ڈھونڈ و  اسکی اھمیت اتنی ہے جتنی میرے حسن و حسین کی ۔

کنیز نے پوری کوشش کے بعد جب اسے ڈھونڈا  تو رسول (صلی اللہ علیہ وآلہ اسلم) نے وہ جناب سیدہ کو دی  کہ  جس پر یہ لکھا تھا مؤمن نہیں ہے  وہ شخص کہ جس سے اس کے ھمسایے امان میں نہ ہوں  ۔ جو بھی خدا    اور  روز  قیامت پر ایمان رکھتا ہے وہ کبھی بھی ہمسایہ کو اذیت  نہیں دے گا ۔

ھمسایہ کسے کہتے ہیں ؟

قال رسول الله صلی‌الله‌علیه‌وآله‌وسلم کل اربعین داراً جیران من بین یدیه و من خلفه و عن یمینه و عن شماله.

رسول خدا (صلی اللہ علیہ وآلہ اسلم) فرماتے ہیں  چاروں طرف   (دائیں  بائیں  آگے  پیچھے   )چالیس   چالیس گھر  انسان کے ھمسایہ شمار ہوتے ہیں ۔

پڑوسی  کا حق پڑوسی پر

حق الجاران مرض عدته وان مات شیعته وان ااستقرضک اقرضته وان اصابته مصیبة عزیته وولا ترفع بنائک فوق بنائه فتسد علیه الریح.

رسول خدا (صلی اللہ علیہ وآلہ اسلم) فرماتے ہیں   ھمسایہ وہ ہے کہ اگر مریض ہو جائے تو اس کی عیادت کو جائے اور اگر مر جائے تو اس تشیع جنازہ میں شرکت کرے  اگر قرض مانگے تو اسے قرض عطا کرے اگر اس کے ہاں کوئی خوشی ہو تو اس کی خوشی میں شرکت کرے اگر مصیبت آ پڑے  تو اسے تعزیعت پیش کرے اور کہا  اپنے مکان کی حدوں کو اس کی طرف نہ بڑھاؤ اور ھوا  کا رخ  اس پر بند نہ ہونے دو۔

پڑوسی  کی ناموس کی حفاظت

قال رسول الله صلی‌الله‌علیه‌وآله‌وسلم ، من اطلع علی بیت جاره فرای عورة رجل او شعر امراة او شیئاً من جسدها علی الله ان یدخله النار لا یبالی

رسول خدا (صلی اللہ علیہ وآلہ اسلم) فرماتے ہیں  کوئی شخص بھی  ھمسایے کے گھر میں  نظر ڈالے (چاہے مرد ہو یا عورت) یہاں تک کہ تھوڑا سا بدن یا تھوڑے  سے کسی خاتون کے بال ہی کیوں نہ دیکھے  تو خدا وند متعال اسے جہنم میں اوندھے منہ ڈالے گا ۔

پڑوسی  کے لیے دعا

امام حسن علیہ السلام فرماتے ہیں ایک رات میں نے اپنی ماں جناب فاطمۃ الزھراء علیھاالسلام کو دیکھا کہ پوری رات ھمسایوں کے لیے دعا کرتی رہیں صبح جب میں نے پوچھا تو فرماتی ہیں بیٹا پہلے ھمسایوں کے لیے دعا کرتے ہیں پھر اپنے لیے ۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

حوالہ جات

رساله الحقوق امام زین العابدین علیه السلام.
نهج الفصاحة صفحهء 546 شماره 2640
من لا یحضره الفقیه صفحهء 468
سفینة البحار جلد 1 حدیث فاطمه

Add new comment

Plain text

  • No HTML tags allowed.
  • Web page addresses and e-mail addresses turn into links automatically.
  • Lines and paragraphs break automatically.
1 + 7 =
Solve this simple math problem and enter the result. E.g. for 1+3, enter 4.
www.welayatnet.com
Online: 29